Official Web

امریکا نے طالبان کیساتھ امن معاہدے کی تیاری کا اشارہ دیدیا

امریکا کی اعلیٰ سیاسی و عسکری قیادت نے امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ سے ملاقات کی جس میں افغانستان سے امریکی فوج کے انخلا اور طالبان کے ساتھ امن معاہدے پر غور کیا گیا۔

امریکی نائب صدر مائیک پینس، وزیر خا رجہ مائیک پومپیو، وزیر دفاع مارک ایسپر، میرین جنرل، چئیرمین آف دی جوائنٹ چیفس آف اسٹاف جنرل جوزف ڈنفورڈ، قومی سلامتی کے مشیر جان بولٹن اور خصوصی نمائندہ برائے افغانستان زلمے خلیل زاد نے امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ سے ملاقات کی۔

طالبان کیساتھ غیر ملکی افواج کے انخلاء کا نہیں امن کا معاہدہ چاہتے ہیں: زلمے خلیل زاد

ترجمان وائٹ ہاؤس کا کہنا ہے کہ ڈونلڈ ٹرمپ سے ان کے اعلیٰ مشیروں کی بات چیت بہت اچھی رہی۔

غیر ملکی خبر ایجنسی کے مطابق وائٹ ہاوس نے طالبان کے ساتھ امن معاہدےکی تیاری کا اشارہ دے دیا ہے۔

خبر ایجنسی کے مطابق زلمےخلیل زاد طالبان سے امن معاہدےکو حتمی شکل دینے کے لیے رواں ہفتے قطر جائیں گے، معاہدے سے افغان حکومت، طالبان اور دیگر فریقین کے درمیان بات چیت کی راہ ہموار ہوئی ہے۔

عمران خان کا امریکی صدر سے رابطہ، مقبوضہ کشمیر کی صورتحال پر بات

یاد رہے کہ گزشتہ روز امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ اور وزیراعظم عمران خان کے درمیان ٹیلی فونک رابطہ ہوا تھا جس میں مقبوضہ کشمیر اور افغانستان کے معاملات پر بات چیت کی گئی۔

چند روز قبل زلمے خلیل زاد نے بھی اپنے بیان میں کہا تھا کہ طالبان کے ساتھ ایسا امن معاہدہ چاہتے ہیں جس سے فوجی انخلاف ممکن ہو سکے۔

Comments
Loading...