Official Web

لوگوں کو ہتھکڑیاں لگاوٴ، جیلوں میں ڈالو اور پھر کہتے ہیں معیشت بھی چلاؤ، آصف زرداری

اسلام آباد: پاکستان پیپلز پارٹی کے چیئرمین آصف زرداری نے کہا ہے کہ لوگوں کو ہتھکڑیاں بھی لگاوٴ، جیلوں میں بھی ڈالو اور پھر کہتے ہیں معیشت بھی چلاؤ۔

اسلام آباد میں احتساب عدالت کے باہر میڈیا سے بات کرتے ہوئے آصف زرداری نے کہا کہ 80 سال کے بوڑھوں کو عدالت میں لایا جارہا ہے، ہتھکڑیاں لگائی جاتی ہیں اورجیلوں میں بھیجا جاتا ہے۔ لوگوں کو ہتھکڑیاں بھی لگاوٴ، جیلوں میں بھی ڈالو اور پھر کہتے ہیں معیشت بھی چلاوٴ۔ قانون کہتا ہے کہ جرم ثابت ہونے تک ملزم عدالت کا پسندیدہ بچہ ہوتا ہے، ابھی تو مجرم کوئی نہیں، ابھی تو کسی کے خلاف جرم ثابت ہی نہیں ہوا، ابھی تو یہ سوچ ہی رہے ہیں۔

چیئرمین نیب کے انٹرویو کے حوالے سے آصف زرداری نے کہا کہ چیئرمین نیب کو انٹرویو دینے کا حق نہیں، ان کا عہدہ انہیں انٹرویو دینے کی اجازت نہیں دیتا، اگر انہوں نےانٹرویو دیا ہے تو قانونی کارروائی کریں گے۔

صحافی نے سوال کیا کہ 9 ماہ میں اپوزیشن کا اتحاد مضبوط نہیں ہوا کیا اب ایسا ہوگا ، جس پر آصف زرداری نے کہا کہ 9 ماہ میں ہم نے ایسا سوچا ہی نہیں تھا۔

مریم نواز کی جانب سے وزیر اعظم کو جعلی قرار دیئے جانے کے بیان سے متعلق سوال پر سابق صدر مملکت نے کہا کہ میں نے تو شروع سے ہی کہا یہ سلیکٹڈ وزیر اعظم ہے۔

اس سے قبل ادھر اسلام آباد کی احتساب عدالت کے جج محمد ارشد ملک نے جعلی اکاؤنٹس کیس پر سماعت کی، سماعت کے دوران آصف زرداری اور فریال تالپور کو ریفرنس کی نقول فراہم نہ کی جاسکیں۔ جس پر عدالت نے کارروائی 30 مئی تک ملتوی کر دی۔

دوسری جانب آصف زرداری نے اسلام آباد ہائی کورٹ میں ایک اور درخواست ضمانت قبل از گرفتاری بھی دائر کر دی۔ جس میں انہوں نے موقف اختیار کیا ہے کہ اگر چیئرمین نیب نے انٹرویو دیا ہے تو ہم اس کے خلاف کارروائی کریں گے، اس لئے عدالت نیب کو گرفتاری سےروکے اور ان کی ضمانت منظور کی جائے۔

Comments
Loading...